خط…………حیا فاطمہ

سلام۔۔۔احوال ندارد۔۔۔۔ لو دیکھو بیٹھ گئی ایک بار پھر لکھنے۔۔۔۔۔خط کیا ہے؟؟ بے کسی۔۔۔بے بسی کا ایک گواہ۔۔۔۔۔ہاں تو تم سے پوچھوں گی۔۔۔۔کیا تم آج بھی مصروف ہو۔۔اپنی پڑھائی میں۔۔۔۔؟جانتے ہو۔۔۔۔؟آج بھی تمام شب گذری اس خیال میں کہ تم کیا سوچتے ہو گے۔۔۔۔۔تم کس حال مین ہو گے؟ کیا کبھی تمہیں میری ہاد آئی ہو گی؟؟لیکن۔۔۔۔۔۔کون جانے۔۔؟؟ میں اپنا حال خود ہی کہے دیتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔میں بہت خوش ہوں۔۔۔۔۔۔۔مگر معلوم نہین روح کیوں دیمک زدہ ہے۔۔۔۔۔۔۔میں آباد ہوں۔۔۔۔۔۔دل مردہ مگر ویران ہے۔۔۔۔۔۔۔میں صحت مند ہوں۔۔۔۔۔مگر سانس اٹک جایا کرتی ہے۔۔۔۔۔۔۔ازندہ بھی تو ہوں۔۔۔۔مگر روز آدھی شب کو اپنے معبد میں جا لیٹتی ہوں۔۔۔رگ رگ میں خون ہے۔۔۔مگر زنگ بھی تو ہے۔۔ ہاں ہاں تم میری فکر مت کرنا ۔۔۔میں ٹھیک ہوں۔۔۔۔اور ہاں اب تمھاری تصویر کو گھنٹوں نہیں دیکھا کرتی۔۔۔۔۔۔۔نقش ثبت ہیں آنکھ کے پردے پر اب۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن۔۔۔۔۔میں تمہیں خا مو شی سے۔۔۔۔۔۔چپ چاپ۔۔۔۔۔۔دیکھے جاوں گی۔۔۔۔۔۔۔اور ہاں انتظار تو رہے گا تمہارا آخری سانس تک۔۔۔۔۔کیا معلوم کہ کب آخری سانس ہو۔۔۔۔۔؟؟ مگر تم پریشان مت ہونا۔۔۔میں ٹھیک ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔تم اچھا پڑھنا۔۔۔اور معاشرے کا ایک کامیاب فرد بننا۔۔۔۔۔۔۔میری دعائیں تمہارے ساتھ ہیں۔۔۔۔۔۔۔آباد رہو۔۔۔۔۔کسی کے بھی رہو بس آباد رہو۔۔۔۔ اور ہاں۔۔۔۔۔۔ایک آخری بات۔۔۔۔۔ یہ تین سو اکیسواں خط بھی میرے میز پر دھرا رہے گا۔۔۔۔۔!! فقط تمہاری۔۔۔ “”کوئی نہیں””

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *