سوال…………….عادل مقبول

سوال  شعور کی زنبیل میں ٹھاٹھیں مارتے سوال کے موتی۔۔۔۔ فرط جذبات میں چھلک گئے۔۔۔خیال کی لہروں کے ساتھ بہتے یہ۔۔۔عقل کے خشک ساحل سے جا ٹکرائے۔۔۔ ساحل نے جواب کی ریت سے انہیں خوب رگڑا۔۔۔نتیجہ یہ نکلا کہ چمک پہلے سے مانند پڑگئی۔۔۔پھر طوفان۔۔۔کسی اور جزیرے کی ریت کو ساتھ اڑا لایا۔۔۔مزید رگڑ پیدا ہوئی۔۔۔طوفانوں کا سلسلہ جاری رہا۔۔۔اور آخر چمک کھو گئی ۔۔۔ہیئت بدل گئی۔۔۔اور وجود دم توڑ گیا۔۔کہ پھر علم کی باد صبا۔۔۔سوال کے اجڑے موتیوں کی باقیات کو اڑا لے گئی۔۔۔اور انہیں شعور کی زنبیل کے حوالے کردیا ۔۔۔ باقیات نے دوسرے موتیوں میں ضم ہوکر انہیں مکمل کردیا۔۔۔اور پھر۔۔۔۔پھر۔۔۔۔ شعور کی زنبیل سے کچھ موتی چھلک گئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *