Anxiety by Rizwan Shah

تحریر: رضوان شاہ

یہ جو اضطراب ہے۔۔۔۔۔ بے چینی ہے۔۔۔۔۔ ایک کمی کا احساس۔۔۔۔۔ کچھ پا لینے کی تڑپ۔۔۔۔۔ سب کچھ ہے مگر تشنگی ہے کہ مٹنے کا نام نہیں لیتی۔۔۔۔۔ آنکھ کہتیanxiety ہے بس ایک جھلک ۔۔۔۔۔۔ دل کہتا ہے بس وہ کہیں سے سامنے آ جائے۔۔۔۔۔ مگر اک خیال آتا ہے کہ کیا اک جھلک کافی ہو گی۔۔۔۔۔ پیاس بجھے کب اک درشن سے من سلگے بس ایک لگن میں یہ پیاس بھی تو اسی کی عطا ہے۔۔۔۔۔ جس نے مجھے یہ پیاس عطا کی ہے وہ ہی سرشار بھی تو کرے گا۔۔۔۔۔ جس نے یہ اضطراب اور بے چینی بخشی ہے وہی دوا بھی تو کرے گا۔۔۔۔۔ پھر خیال آتا ہے کہ اگر یہ بے چینی ہی نہ رہی تو پھر میرے پاس رہ ہی کیا جائے گا۔۔۔۔۔ اب تک کا یہی تو سرمایہ ہے۔۔۔۔۔ یہی بے چینی تو اس ذات کی تلاش میں میری ہمدم ہے۔۔۔۔۔ اور یہی اضطراب اس بات کی نوید لئے ہوئے ہے کہ کہیں نہ کہیں کبھی نہ کبھی کسی نہ کسی مقام پر ملن کی رت بھی آئے گی۔۔۔۔۔ سوچ رہا ہوں یہ اضطراب یہ بے چینی بھی مجھ سے چھن گئی تو باقی کیا رہنا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *