Sadness by Aliya Younas

تحریر: عالیہ یونس

کہنے والے کہتے ہیں اداسی ہے ۔۔۔۔۔ چھائی پڑی ہے سارے وجود پہ ۔۔۔۔۔۔ جیسے کوئی قید ہو اندر ۔۔۔ پنجرا توڑ کہ جانا چاہتا ہو ۔۔۔پھڑ پھڑ اتا ہوا کوئی ۔۔۔۔جسم sad 1زنداں سے سر ٹکراتا ہوا ۔۔۔۔۔۔ تو کیسے نا زلزلہ آۓ ۔۔۔۔ یہ جو وجود بھیتر چراغ لئے بیٹھے ہو ۔۔۔۔ یہ جو پرندہ ہے تمھارے جسم میں ۔۔۔۔ یہ جو روح ہے ۔۔۔ یہ تمہاری ملکیت ہی کب ہے ،؟ یہ تو کسی کا حصہ ہے ۔۔۔ جو تم لے آۓ ۔۔۔۔۔ یہ تو کسی کی روشنی ہے ۔۔۔اس کا چراغ تو کہیں اور ہے ۔۔۔۔ یہ جو تم لوگوں کو ٹٹولتے پھرتے ہو ۔۔۔۔ تو کیا ڈھونڈھتے ہو ؟ اسی روشنی جیسی روشنی ۔۔۔۔ اسی چراغ کا پتہ ۔۔۔۔ نہیں ملتا تو پھر سر پھوڑ تے ہو ۔۔۔۔ پھر کرلاتے ہو۔۔۔۔۔۔ اسے آزاد کرو ۔۔۔۔ کیوں کہ اسے جانا ہی ہے ۔۔اپنے مرکز کے پاس۔۔۔۔نہیں جائے گی تو اس کا اپنا وجود نہیں رہے گا ۔۔۔۔اس کے ساتھ جا ملے گی تو روشنی بھڑک اٹھے گی اس کی ۔۔۔۔ زیادہ تابناک ۔۔۔۔۔ ملن اس کی زندگی کی ضمانت ہے ۔۔۔۔۔ وصل کی پیاسی ہے ۔۔۔ جب تک وصل نہیں ہو گا ۔۔۔ اس کا حلق خشک ہی رہے گا ۔۔پھر مت کہنا ۔۔اداسی ہے ۔۔یہ رہے گی ۔۔۔جب تک ملن نا ہو ۔۔۔ “اتنا قریب ہو کے بھی،چین نہیں تجھے تو پھر صاف سی بات ہے میاں،اپنی جگہ نہیں ہے تُو !


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *