بیٹی کے نام، عالیہ یونس

میری پہلی بے ربط تحریر ۔۔۔ !!

اس وقت جب کہ تم میرے پہلو میں ہو ۔۔۔۔ اور ایسے سوئی ہو جیسے کبھی میں امی کے بستر پہ ان کے پاس سویا کرتی تھی ۔۔۔ بے فکری ‘ سکون اور محبت کی نیند ۔۔۔۔ آنکھ کھلنے پہ سب سے پہلے وہ پیارا چہرہ دیکھنے کو ملتا تھا ۔۔تو دن روشن ہو جاتا تھا ۔۔۔ ماں ! اس وجود میں اتنا سکون تھا کہ آج جب تم میرے پاس ہو ۔۔۔۔ میں انھیں یاد کر رہی ہوں ۔۔۔۔ سوچ رہی ہوں ماں کیسے بنتے ہیں ؟ مجھ سے تو نہیں بنا جا رہا ۔۔۔ راتوں کو جاگنا ۔۔۔ تمہیں سوتے ہوۓ دیکھتے رہنا ۔۔۔۔ تمہاری ایک آواز پہ میں گہری نیند سے اٹھ جاتی ہوں ۔۔۔۔ پر جب جب تمہیں اٹھاتی ہوں ۔۔۔ میرا دل شدت سے کرتا ہے کہیں سے امی آ جائیں ۔۔۔ اور آ کے مجھے تھپکی دیں ۔۔۔ گلے سے لگا کے کہیں ” میری بیٹی سب کر لے گی ” !! ہر ہر بار جب میں تمہیں سنبھالنے میں ناکام ہونے لگتی ہوں مجھے اس تھپکی کی ضرورت پڑتی ہے ۔۔۔۔ !! پر ماں نہیں آتی ۔۔۔۔ !!

تمہیں سلاتے سلاتے خود سو جاتی ہوں ۔۔۔۔ ایسے لگتا ہے امی نے گلے سے لگا لیا ہو ۔۔۔۔ گہری نیند ۔۔۔۔ پرسکون ۔۔۔ !!
اور پھر بھول جاتی ہوں اب میں بھی ایک ماں ہوں ۔۔۔۔ تمہاری ماں ۔۔۔۔۔ جسے ایک مقررہ مدت تک تمہاری ذمہ داری سونپی گئی ہے ۔۔۔۔ سوچتی ہوں کبھی تم بھی اپنی بیٹی کے پاس لیٹ کے مجھے یاد کرو گی ۔۔۔۔ چاہو گی کہ میں آ کے تمہیں حوصلہ دوں ۔۔۔۔ !!

تم میری بہادر بیٹی ہو گی مومل ۔۔۔۔ !! بہت بہادر ۔۔۔۔ !!

جو ماں کو یاد کر کے آنسو صاف نہیں کرے گی ۔۔۔۔

پر شائد ۔۔۔ !! ماں کو جب بھی یاد کرو ۔۔۔ آنسو صاف کرنے ہی پڑتے ہیں ۔۔۔ !!

خدا تمہیں آباد اور قائم رکھے !! ❤

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *