چلو! چلتے ہیں واپس…تحریر :عامر علی باجوہ

اماں کوہم ”باجی“ کہا کرتے تھے۔ان کے جانے کے بعد بھی اسی نام سے پکارتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔اماں محلے کے بچوں کو قرآن پڑھاتی تھیں اور سلاٸی کڑھاٸی سکھاتی تھیں تو وہ سب باجی پکارتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔تو ہم سب بہن بھاٸی چھوٹے ہوتے سے ہی بس باجی کے لفظ سے آشنا ہوٸے اور ماں کے بجاٸے باجی کہتے۔۔۔۔۔۔

ہم نے بچپن میں دیکھا کہ پڑوسی رشتے داروں سے بھی ذیادہ قریبی ہوا کرتے تھے مثلاً روزانہ تین چار گھروں کے سالن کولیوں(چھنّی) میں ایک سے دوسرے گھر محوِسفر ہوتے۔۔۔

”باجی میں نے بھنڈیاں نہیں کھانی“ یہ کہنا ہی ہوتا کہ باجی نے کولی میں بھنڈیوں کاسالن ڈالنا اور کہنا جاٶ آپا ناہید کو کہنا کہ یہ باجی نے بھنڈیاں بھیجی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔مانگنے میں شرم اسلٸے بھی محسوس کی جاتی تھی کہ ابھی کل تو چھوٹے بھاٸی کو دال پسندنہ تھی تو ان کی طرف سے آلوٶں کا سالن منگوایا تھا تو روز روز تو ایک ہی سلسلہ شرمندگی کا باعث سمجھا جاتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔حلانکہ یہ سالن کے لین دین کا سلسہ پوری آب وتاب سے جاری بھی تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی پہل ہمارے گھر سے ہوتی تو کبھی ان کی طرف سے کیونکہ اپنے سالن کو دو گھروں میں جانا ہی ہوتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب جاتا تھا توواپس خالی چھنّی تو نہیں آنی ہوتی تھی نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔سالن مکس ہوکر ہی چلتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہر گھر کے فرد کو پتا تھا کہ پڑوسیوں کے کس بچے یا بڑے کو کیا پسند ہے اور کیا نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دوسرے گھروں سے بھی دو تین اضافی سالن کے تحفے آنے ہی ہوتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔مِل ملا کے کھایا جاتا تھا۔۔۔

خیر بات ہورہی تھی بھنڈیوں کی ۔۔۔۔۔جس سے نفرت مجھے بچپن یا شاید عالم ارواح سے ہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اکثر ایسا ہوتا کہ میں بھنڈیوں کے سالن کی چھنّی لے کر پروس میں خالہ کو جاکر دیتا کہ یہ باجی نے بھیجی ہیں تو آگے سے مسکراہٹ سے جواب ملتا
”پُت آسی وی بھنڈیاں ای پکایاں نیں“ ۔۔۔

خیر ہمارا سالن رکھ لیا جاتا اور اُسی چھنّی میں اپنا ویسا ای تحفہ ڈال دیا جاتا۔۔۔۔۔۔۔۔ہم سالن لے کر بَاروبار تیسرے گھر چلے جاتے ہم دروازہ کھٹکھٹانے کی رسم سے مستشنٰی تھے۔۔۔۔۔ تو وہاں سے سالن کا تبادلہ کرواتے اور گھر آکر اتنی لمبی تفصیل بیان کرنے سے گریز کرتے کہ پیٹ کی آگ کو بجھانے کیلٸے ہم نے کیا کیا جتن کیٸے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔بات کبھی چُھپی رہ ہی نہ سکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بعض اوقات گھر کی انکواٸری میں ہی پکڑے جاتے کہ کس نے سالن پکڑا کس نے ڈال کر دیا اور خالہ نے سویٹر کی بناٸی کا کچھ پوچھا؟
ان کا چھوٹا کاکا کیسا ہے؟۔۔۔۔۔۔۔۔ان سوالات میں ایسا پھنسایا جاتا کہ ہم مختصرً سچ اُگل دیتے کہ ہم نے تو یہ ردّوبدل کیا ہے اور اگر چھپا بھی لیتے تو بات کھُل ہی جاتی کیونکہ ان تمام پڑوسی خواتین نے دن میں 10 سے 15 مرتبہ تو بنیرے کی آڑ سے تو کبھی گلی کے دروازے سے تو کبھی جا یا آ کر ملنا ہی ہوتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
”تم خالہ سے جو بھنڈیاں لے کر آٸے تھے وہ کہاں ہیں“ یا دوسرے گھر والی بی بی باجی سے کہتیں کہ۔۔۔۔” ہیں۔۔۔۔ تسی ہون نمک مرچ گھٹا دیتی اے“۔۔۔۔۔۔۔آخر بات کھل جاتی کہ کدھر کے نوالے کہاں سے ہوکر کہاں تلک پہنچ چکے ہوتے۔۔۔جب ہم سے پوچھ گچھ ہوتی تو ہم کہتے ”جیسے باتیں کہاں کی کہاں سے ہوکر کہاں پہنچ جاتی ہیں تو سالن پہنچ گٸے تو کیا ہوا“۔۔۔۔۔

چھت پر پتنگ اُڑانا مشغلہ تھا لیکن چَین وہاں بھی نہیں تھا۔کبھی آواز پڑتی کہ نمک لادو کبھی پیاز۔۔۔۔ کبھی پڑھاٸی نہ کرنے کے طعنے۔۔۔۔
لاہور کے قریب ہی انڈین ٹی وی چینل دوردرشن کی براڈکاسٹنگ آسانی سے ٹی وی پر دیکھی جاسکتی تھی لیکن ایک مسٸلہ تھا کہ جب دوردرشن کی نشریات ٹی وی پر دیکھی جاتی تو اپنا پی ٹی وی صاف نہ رہتا اینڈ واٸس ورسا۔
چھت پر لگے 20 فٹ اونچے انٹینے کا رُخ شرقاً غرباً کرنے سے انڈین چینل دوردرشن کی نشریات ٹی وی پر واضح نمودار ہوتی اور انٹینے کا رُخ شمالاً جنوباً کرنے سے ptv ایسے پورے رُعب اور دبدبے سے ظہور پذیر ہوتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رات کے وقت مصیبت اُس کو پڑتی جس سے کہا جاتا کہ ”احمد جاٶ اوپر جاکر انٹینا لاہور کی طرف یا انڈیا کی طرف کر کے آٶ“۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ جان جوکھوں والا کام پھر اُسی کو جاکر کرنا پڑتا جس کی مطلوبہ ٹارگٹ میں ذاتی دلچسپی ہوتی اور باہم کمیونیکیشن مطلب رابطہ کیلٸے صحن میں ایک سہولت کار کھڑا کیا جاتا جو تصویر اور آواز کے صاف ہونے کی اطلاع اونچی آواز میں اوپر چھت پر موجود رُکن تک پہنچاتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ تھوڑا ٹھیک ہوا۔۔۔۔۔۔ پھر خراب ہوگیا۔۔۔۔۔۔۔نہیں تھوڑا واپس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس ٹھیک ہے آجاٶ اور اُس بندے کے آنے تک تصویر یا آواز اگر پھر خراب ہوٸی ہوتی تو سیدھا اُسے موردِ الزام ٹھہرایا جاتا کہ کہا بھی تھا تھوڑا داٸیں کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاٶ اب دوبارہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب جانے اور نہ جانے کا ایک نیا سلسلہ شروع ہوجاتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔بات پھر ایسی لڑاٸی پر ختم ہوتی جس میں باجی کو اپنا کردار ادا کرکے ہمارا جوتیوں سے سواگت کرنا پڑتا۔۔۔۔۔۔۔۔ایک دفعہ کا ذکر ہے انٹینا ٹھیک کر رہا تھا کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چلیں رہنے دیں۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر کبھی سہی۔۔۔۔۔۔اب دو دہایاں پہلے کے کتنے واقعات بندہ یاد رکھے۔

چلو چلتے ہیں واپس۔۔۔۔۔۔ پھر اُسی زمانے میں
تھوڑا ہنس لیں اگر۔۔۔۔۔۔۔۔۔سودا یہ بُرا تو نہیں

لیکن ہر حال، مستقبل کا ماضی ہے اور شاید ہمیں ماضی اچھا لگتا ہے تو حال بھی پھر اچھا ہی ہے مستقبل سے اور مستقبل اچھا ہی ہوگا اپنے سے اگلے سے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *